Urdu Chronicle

Urdu Chronicle

ٹاپ سٹوریز

پارلیمنٹ ہتھیار نہیں ڈالے گی، آئین پر سب سے زیادہ حملے عدلیہ نے کئے،سپیکر سپریم کورٹ کارروائی کے منٹس طلب کریں، خواجہ آصف

Published

on

سپریم کورٹ کی طرف سے قانونی اصلاحات قانون بناتے وقت کی کارروائی اور قائمہ کمیٹی میں بحث کے منٹس طلب کرنے پر پارلیمنٹ میں شدید ردعمل دیکھنے میں آیا۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے اسپیکر سے مطالبہ کیا کہ وہ بھی  سپریم کورٹ سے کارروائی کے منٹس طلب کریں۔ خواجہ آصف نے کہا  ہمیں عوام نے لاکھوں ووٹ دے کرپارلیمنٹ بھیجا۔ہدایات دینا سپریم کورٹ کا کام نہیں۔

عدالتی حکم پر مذاکراتی عمل کی شدید مخالفت کا موقف رکھنے والے خواجہ آصف نے  قومی اسمبلی سے خطاب میں جذباتی خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ آئین میں کہیں نہیں لکھا کہ سپریم کورٹ پنچایتیں لگوائے۔ وزرائے اعظم کی گردنیں لینے کا رواج ختم ہونا چاہئے۔

خواجہ آصف نے مشرف کے اقتدار پر قبضے اور اس کے بعد  سپریم کورٹ کی طرف سے اس قبضے کو جائر قرار دینے اور ایک آمر کو آئین میں ترمیم کا حق دینے کا اقدام بھی یاد کرایا۔ خواجہ آصف نے کہا کہ ہمیں اپنے وزرائے اعظم کی حفاظت کرنی چاہئے۔پارلیمان کی گردن لی گئی، اس کا خون ہوا، کوئی حساب دے گا۔جنرل پرویز مشرف کوآئین میں ترمیم کا حق تک دے دیا گیا۔جنرل مشرف وردی میں مکے لہراتا رہا۔

خواجہ آصف نے ماضی کے عدالتی فیصلوں کا حوالہ دینے کے بعد سوال  کیا کہ سپریم کورٹ اپنا ماضی صاف کرنے کیلئے کیا کرے گا؟۔میثاق جمہوریت کے بعد پارلیمان نے اپنی مدت پوری کی۔ پارلیمان آئین کا تحفظ کرے گا، آئین سے ماورا کوئی چیز نہیں ہوگی۔ہم نے بہت حساب دئیے ، ہمیں بھی حساب دیا جائے۔

خواجہ آصف نے ججز اور ارکان پارلیمنٹ کی مراعات اور تنخواہوں کا بھی موازنہ پیش کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہماری تنخواہ 1 لاکھ68 ہزار تنخواہ ہے، ان کی کتنی ہے؟۔ان کے طبقے کے لوگ 1 کروڑ20 لاکھ پکڑ رہے ہیں۔یوم حساب آنا چاہئے۔عدلیہ نے آمروں کی حمایت کی لیکن قیمت ادا نہیں کی۔اس طرح نہیں ہوگا، انھیں حساب دینا ہوگا، پارلیمنٹ کو کھڑا ہونا پڑے گا۔آئین پر سب سے زیادہ حملے عدلیہ نے کئے۔ہم نے معافی مانگی، ان کو بھی معافی مانگنے دیں، ان کا بھی احتساب ہونا چاہئے۔

خواجہ آصف نے مطالبہ کیا کہ پارلیمان کی خصوصی کمیٹی بنائی جائے جو سابق وزرا اعظم بھٹو، گیلانی اور نوازشریف سے ہونے والی زیادتیوں کا حساب لے۔ انہوں نے کہا کہ آئین شکنوں کی زندہ باقیات کو بلایاجائے اور ان سے بازپرس کی جائے۔

خواجہ آصف نے کہا کہ جنگ لڑنی ہے تو لڑی جائے، پارلیمنٹ ہتھیار نہیں ڈالے گی۔پارلیمنٹ اپنے وزیراعظم کی قربانی نہیں دے گی۔وہ وقت گزر گیا جب وزیراعظم کی قربانی دی جاتی تھی؟۔ بتایا جائے آج تک کتنے ججز کو نا اہل کیا گیا۔ کہاں لکھا ہے چیف جسٹس ڈیم فنڈ اکٹھا کرے گا؟۔ایک ادارہ کوشش کررہا ہے کہ اسمبلیوں کی مدت پوری نہ ہو۔

پچیس سال سے شعبہ صحافت سے منسلک ہیں، اردو کرانیکل کے ایڈیٹر ہیں، اس سے پہلے مختلف اخبارات اور ٹی وی چینلز سے مختلف حیثیتوں سے منسلک رہے، خبریں گروپ میں جوائنٹ ایڈیٹر رہے، ملکی اور بین الاقوامی سیاست میں دلچسپی رکھتے ہیں، ادب اور تاریخ سے بھی شغف ہے۔

Continue Reading
Click to comment

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

مقبول ترین