Urdu Chronicles

Urdu Chronicles

ٹاپ سٹوریز

برآمدات 100 ارب ڈالر تک بڑھانے کا مشن، 20 رکنی وفد کل چین روانہ ہوگا

Published

on

پاکستان کے ایکسپورٹ سیکٹر کے تمام شعبوں کی نمائندگی کرنے والا 20 رکنی وفد اتوار کو چین روانہ ہوگا، دورےکا مقصد پڑوسی اتحادی کے ساتھ اپنے تجارتی خسارے کو کم کرنا ہے۔

اس پیشرفت کو وفاقی وزیر تجارت و صنعت ڈاکٹر گوہر اعجاز نے ہفتے کے روز سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر ایک ویڈیو پیغام کے ذریعے شیئر کیا۔

ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ پاکستان کا چین کے ساتھ تجارتی حجم بہت زیادہ ہے۔ پاکستان چین سے 20 ارب ڈالر کی اشیا درآمد کرتا ہے۔ تاہم، پڑوسی ملک کو صرف 2 بلین ڈالر کی ہی برآمد کی جاتی ہے۔

"گزشتہ تین ماہ میں، ہم نے پاکستان کی برآمدات کو موجودہ 30 بلین ڈالر سے 100 بلین ڈالر تک بڑھانے کے وژن کے ساتھ کئی مشقیں کیں۔ اس سلسلے میں، ہم نے چین میں سب سے بڑی صلاحیت دیکھی ہے، اور مجھے یقین ہے کہ ہمیں اس تجارتی خسارے کو کم کرنے کی ضرورت ہے۔

"ہم نے ٹیکسٹائل کے برآمد کنندگان اور نان ٹیکسٹائل سیکٹر کے مینوفیکچررز کے ساتھ ملاقاتیں کیں اور ان صنعت کاروں کی صلاحیت کا اندازہ لگایا۔ ہم نے 20 رکنی وفد کا انتخاب کیا ہے، جو نئی منڈیوں کی تلاش کے لیے چین جائے گا۔

نگراں وزیر نے کہا کہ پاکستان میں صلاحیت موجود ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ‘میرا ماننا ہے کہ چین ہماری سب سے بڑی صلاحیت ہے، ہم چین کے ساتھ اپنے تجارتی خسارے کو کم کرکے اپنی معاشی پریشانیوں یعنی کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کو ختم کرسکتے ہیں، یہ ہمارے دورے کا بنیادی مقصد ہے’۔

سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر ایک ٹیکسٹ پیغام میں ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ دورہ چین برآمدات کی قیادت میں ترقی کی جانب پاکستان کے سفر کا آغاز ہوگا۔

نگراں وزیر نے بتایا کہ یہ فیصلہ ٹیکسٹائل اور نان ٹیکسٹائل سیکٹرز کے لیے انڈسٹری ایڈوائزری کونسل اور ایکسپورٹ ایڈوائزری کونسل (ای اے سی) کے ساتھ میٹنگز کے بعد کیا گیا ہے جہاں یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ ایکسپورٹ گروتھ کا راستہ چین سے گزرتا ہے۔

ڈاکٹر اعجاز نے لکھا، ’’میں پاکستان میں چین کے سفیر جیانگ زیڈونگ اور چین میں پاکستان کے سفیر خلیل ہاشمی کے ساتھ ساتھ چین کی وزارت تجارت کا پاکستان کو چین کے ساتھ تجارت کو فروغ دینے میں سہولت فراہم کرنے پر شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔‘‘

ای اے سی نے جمعہ کے روز اپنا افتتاحی اجلاس نگراں وزیر تجارت کی صدارت میں منعقد کیا جس میں پاکستان کے 100 بلین ڈالر کے ایکسپورٹ ویژن کا کورس ترتیب دیا گیا۔

کونسل نے اگلے پانچ سالوں میں ملکی برآمدات کو 50 بلین ڈالر تک بڑھانے کی تجاویز پر غور کیا۔

Continue Reading
Click to comment

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

مقبول ترین