Urdu Chronicles

Urdu Chronicles

کھیل

آسٹریلیا میں کمزور بالنگ اٹیک کے ساتھ ٹیسٹ سیریز جیتنا شان مسعود کے لیے مشکل ٹاسک

Published

on

پاکستان ٹیم آسٹریلیا کے اپنے آخری پانچ ٹیسٹ دوروں میں سے ہر ایک میں وائٹ واش ہوئی، اگلے ہفتے پرتھ میں شروع ہونے والی تین میچوں کی سیریز سے پہلے پاکستان کے لیے امیدیں کم ہیں،اور بالنگ اٹیک کمزور ہونے کی وجہ سے نئے کپتان شان مسعود کے لیے آسٹریلیا سے جیتنا ایک مشکل ٹاسک ہے۔

آخری بار پاکستان نے 1995 کے اواخر میں ڈاون انڈر ٹیسٹ جیتا تھا جب موجودہ ٹیم کے تقریباً نصف کھلاڑی پیدا بھی نہیں ہوئے تھے، اور پیٹ کمنز کی قیادت میں آسٹریلیا میں ان کا سامنا موجودہ عالمی ٹیسٹ چیمپئنز سے ہوا تھا۔

مسعود کو ٹیسٹ کپتانی بابر اعظم سے وراثت میں ملی، جنہوں نے گزشتہ ماہ بھارت میں 50 اوورز کے ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں جگہ بنانے میں ناکامی کی وجہ سے آل فارمیٹس کی کپتانی چھوڑ دی۔

پاکستان کے لیے ایک بڑی پریشانی ان کی باؤلنگ یونٹ ہے، جو عام طور پر ان کا مضبوط سوٹ ہوتا ہے۔

تیز رفتار سپیئر ہیڈ شاہین آفریدی گھٹنے کی انجری سے واپسی کے بعد  پہلے جیسے نظر نہیں آ رہے ہیں اور وہ نسیم شاہ کے بغیر زیادہ مؤثر نہیں۔

حارث رؤف نے ٹیسٹ اسکواڈ کا حصہ بننے کی پیشکش کو مسترد کر دیا ہے – محدود اوورز کے ماہر حارث نے اس کی بجائے آسٹریلیا کی فرنچائز بگ بیش لیگ میں کھیلنے کا انتخاب کیا۔

شان مسعود اپنے بلے بازوں سے 400 سے زیادہ کے  ٹوٹل کی توقع رکھتے ہیں لیکن آسٹریلیا کی جاندار پچوں پر یہ آسان نہیں ہوگا۔

پاکستانی کپتان امید کریں گے کہ وہ کینبرا میں جاری ٹور میچ میں ناقابل شکست ڈبل سنچری کے ساتھ اپنے دورے کے لیے ٹون سیٹ کر لیں گے۔

Continue Reading
Click to comment

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

مقبول ترین